پُراسرار کھڑکی

amazing

ایک شخص تھا جو بڑا امیر و کبیر تھا ، بہت بڑا اس کا کاروبار تھا ، جس میں درجنوں ملازمین تھے ، اس کا گھر بھی کافی بڑا تھا اس میں بھی نوکر چاکر کام کرتے تھے ،
دن بھر وہ اپنے بزنس مین رہتا شام کو گھر واپس آتا ، اس کا جو اپنا بیڈروم تھا وہ ایک جوان العمر لڑکی صفائی کرتی تھی ،
ایک دن وہ اتفاق سے وقت سے پہلے گھر آگیا جب یہ اپنے کمرے میں آیا اور نوجوان لڑکی کو صفائی کرتے ہوئے دیکھا ،

بس شیطان نے اس کے دل میں خیال ڈالا کہ میں اس لڑکی کو روک لوں تو اس کی آواز کوئی نہیں سنے گا ، اگر یہ میری کسی سے شکایت بھی کرے گی تو کوئی اس کی بات کو نہیں مانے گا ، میں تو پورے پولیس اسٹیشن خرید سکتا ہوں ، ملازمین سب میری بات مانیں گے ،
لڑکی نے دیکھا کہ مالک وقت سے پہلے آگئے ہیں تو وہ جلدی سے جانا چاہا تو مالک نے فوراً ایک زور دار آواز میں کہا ٹھہر جاؤ ،
وہ مالک کے تیور دیکھ کر گھبرا گئی ،
مالک نے کہا سب کھڑکیاں دروازے بند کردو
اب لڑکی پریشان کہ میں کروں تو کیا کروں لیکن
اس کے دل تقوی تھا اَللّـــــــــہ کا خوف تھا ، آنسوں بہہ رہی ہیں اور اَللّـــــــــہ سے دعاء بھی کر رہی ہے ،
چنانچہ اس نے ایک ایک کر کے سب کھڑکیاں دروازے بند کرنا شروع کی ، کافی دیر ہوگئی لیکن
وہ آ نہیں رہی ہے مالک نے ڈانٹ کر کہا کتنی دیر ہوگئی اب تک دروازے کھڑکیاں بند نہیں کی اور تو میرے پاس آئی نہیں ؟
تو اس لڑکی نے روتے ہوئے کہا مالک میں نے سارے دروازے بند کردیئے ساری کھڑکیاں بند کر دی مگر
ایک کھڑکی کو بہت دیر سے بند کرنے کی کوشش کر رہی ہوں لیکن مجھ سے بند نہیں ہوپا رہی ہے ،
تو اس نے غصے سے کہا وہ کونسی کھڑکی ہے جو تجھ سے بند نہیں ہورہی ہے ؟
تو لڑکی نے کہا میرے مالک جس کھڑکیوں سے انسان دیکھتے ہیں جن کھڑکیوں سے مخلوق دیکھتی ہے میں نے وہ ساری کھڑکی بند کر دی لیکن
جس کھڑکی سے رب العــــــــــالمین دیکھتا ہے اس کھڑکی کو بہت دیر سے بند کرنے کی کوشش کر رہی ہوں لیکن مجھ سے بند نہیں ہو پارہی ہے
اگر آپ سے بند ہوسکتی ہے تو آکر بند کر دیں

فوراً بات سمجھ میں آ گئی کہ واقعی میں اپنے گناہوں کو کو انسانوں سے چھپا سکتا ہوں لیکن رب العــــــــــالمین سے نہیں چھپا سکتا وہ اٹھا جلدی سے وضو کیا نماز پڑھی اَللّـــــــــہ سے معافی مانگا ،،،
#منقول
*فـــــــــــــــــائدہ*

ہم میں سے ہر شخص غور کریں کوئی اس کھڑکی کو بند کر سکتا ہے جس سے رب العــــــــــالمین دیکھتا ہے
تو پھر ہم جرآت کے ساتھ گناہ کیوں کرتے ہیں
تو پھر ڈٹائی کے ساتھ گناہ کیوں کرتے ہیں ؟ وقتی طور پر نفس کا غالب آجانا یہ الگ بات ہے لیکن ہم گناہ کرتے ہیں اور گناہ پر گناہ کرتے جاتے ہیں عادت ہوتی ہے ہمارے گناہ کرنے کی ہم گناہ کو مکھی کی طرح سمجھتے ہیں پھونک ماری یوں اڑا دی اسی لئے نا کہ ہم کو اس کھڑکی کا یقین نہیں ہے

اَللّـــــــــہ پاک ہم سب کو یقین کی دولت سے مالا مال فرمائے اور گناہوں سے بچنے کی توفیق عطاء فرمائے

( آمین )

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s